’انٹیلیجنس ریپبلک آف غائبستان‘


وطن عزیز جہاں اغوا برائے تاوان ایک صنعت کا درجہ حاصل کرچکی تھی وہاں اب ’اغوا براۓ گمشدگی‘ کی وارداتیں ریاستی ہنر و حرفت کا اعلیٰ نشان بن چکی ہیں۔ ’باطل سے دبنے والے اے آسماں نہیں ہم۔۔۔۔‘

 

رکھوالوں کی نیت بدلی گھر کے مالک بن بیٹھے
جو غاصب محسن کش تھے صوفی سالک بن بیٹھے
جو آواز جہاں سے اٹھی اس پر تیر تبر برسے
ایسےہونٹ سلے لوگوں کے آوازوں کو بھی ترسے

احمد فراز کی آواز ہر دور کی حکومتوں کے لیے درویش کا اپنی جوتی میں بھیجا ہوا رقعہ ہے۔

Read full article on: BBCUrdu

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s