لاکھوں افراد ووٹر لسٹ سے خارج

پاکستان میں انتخابی عمل کی نگرانی کرنے والی پینتیس غیرسرکاری تنظیموں نے کہا ہے کہ ملک میں آئندہ عام انتخابات کے لیے جس طریقے سے ووٹر فہرستیں تیار کی جارہی ہیں اس سے سوا دو کروڑ سے زیادہ افراد حق رائے دہی سےمحروم ہو جائیں گے۔

چاروں صوبوں میں کام کرنے والی پینتیس مختلف غیرسرکاری تنظیموں (این جی اوز) نے فری اینڈ فیئر الیکشن نیٹ ورک (فافین) کے نام سے ایک مشترکہ تنظیم بنائی ہے جس کا مقصد منصفانہ انتخابات کے لیے شہریوں کی مدد سے انتخابی عمل کی نگرانی کرنا ہے۔

جمعہ کو لاہور میں غیرسرکاری تنظیم فافین کے اجلاس کے بعد اس کے سیکرٹری جنرل سرور باری نے کہا کہ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ملک میں تقریبًا سوا دو کروڑ افراد کے پاس شناختی کارڈ نہیں ہے جس سے ان کا نام ووٹر لسٹوں میں درج نہیں کیا جا رہا۔

ان کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن نے ووٹر فہرستوں میں نام کے اندراج کے لیے کمپیوٹرائزڈ شناختی کارڈ پیش کرنا لازمی شرط بنا دیا ہے۔

فافین کے سیکرٹری جنرل نے کہا کہ الیکشن کمیشن نئے سرے سے ووٹر فہرستیں بنا رہا ہے جو توقع ہے کہ اگلے چند ماہ میں عوام کے سامنے پیش کر دی جائیں گی۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ملک کے مختلف علاقوں سے یہ اطلاعات موصول ہورہی ہیں کہ الیکشن کمیشن نے ووٹروں کے اندراج کے لیے جو فارم تقسیم کیے تھے ان میں سے پچیس فیصد سے زیادہ فارم اسے واپس نہیں مل سکے۔ یوں لوگوں کی ایک بڑی تعداد اس وجہ سے بھی ووٹر کے طور پر درج نہیں ہوسکے گی۔

انہوں نے کہا کہ حزب اختلاف کے بہت سے سیاسی رہنماؤں نے شکایت کی ہے کہ ان کے حلقوں میں ووٹروں کے نام فہرستوں سے خارج کیے جا رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ غیرسرکاری تنظیموں کا موقف تھا کہ الیکشن کمیشن ووٹر فہرستیں بنانے کے لیے نئے سرے سے اعداد و شمار اکٹھا کرنے کے بجائے شناختی کارڈ بنانے والے قومی ادارہ نادرا کے اعداد و شمار کی بنیاد پر ووٹر فہرستیں بناتا تو زیادہ تعداد میں ووٹروں کا اندراج ہوسکتا تھا۔

غیرسرکاری تنظیموں نے یہ مطالبہ بھی کیا کہ بھارت کی طرح پاکستان میں بھی الیکشن کمیشن ووٹر لسٹوں کو انٹرنیٹ پر فراہم کرے تاکہ لوگ انہیں جب چاہیں دیکھ سکیں اور ان تک رسائی حاصل کرسکیں۔

فافین کے سیکرٹری جنرل کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن ملک میں اگلے عام انتخابات منصفانہ کرانے کے لیے تمام انتخابی حلقوں کے پولنگ سٹیشنوں کی سکیم کو بھی الیکشن سے ایک مہینہ پہلے حتمی شکل دے اور انہیں انٹرنیٹ پر فراہم کرے کیونکہ گزشتہ عام انتخابات میں ایک دن پہلے تک پولنگ سٹیشن تبدیل کیے جاتے رہے جس سے دھاندلی کا تاثر پیدا ہوا۔

انہوں نے کہا کہ بھارت اور پاکستان میں الیکشن کمیشن کے اختیارات لگ بھگ ایک ہی جیسے ہیں لیکن پاکستان میں الیکشن کمیشن ان اختیارات کو استعمال نہیں کرتا۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان اپنی ساکھ قائم کرنے کے لیے عملی اقدامات کرے اور اپنے اختیارات استعمال کرے۔

پینتیس غیرسرکاری تنظیموں کے نیٹ ورک (فافین) کا موقف تھا کہ صدر جنرل پرویز مشرف نے حکمران جماعت مسلم لیگ اور روشن خیال اور اعتدال پسند افراد کے حق میں مسلسل مہم چلا کر یہ تاثر پیدا کردیا ہے کہ اگلے عام انتخابات میں ریاستی مشینری غیرجانبدار نہیں ہوگی۔

غیرسرکاری تنظیموں نے مطالبہ کیا کہ الیکشن کمیشن صدر مشرف کے بیانات کا نوٹس لیتے ہوئے ان کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کرے۔

پاکستان میں اکتوبر سنہ دو ہزار دو کے عام انتخابات کے نتیجہ میں جنم لینے والی موجودہ پارلیمنٹ کی مدت اکتوبر سنہ دو ہزار سات میں ختم ہوجائے گی۔ اس سال کے آخر یا اگلے سال کے شروع میں عام انتخابات کا انعقاد متوقع ہے۔

Source: BBCUrdu

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s